Home / News / صادق آباد: 8مارچ کو جماعت اسلامی ملک بھر میں’’عالمی یوم خواتین‘‘ منائے گی، تسنیم سرور

صادق آباد: 8مارچ کو جماعت اسلامی ملک بھر میں’’عالمی یوم خواتین‘‘ منائے گی، تسنیم سرور

صادق آباد( نامہ نگار)صوبائی ناظمہ حلقہ خواتین جماعت اسلامی جنوبی پنجاب تسنیم سرور نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ 8مارچ کو خواتین جماعت اسلامی ملک بھر میں ”عالمی یوم خواتین“منائیں گی اس سلسلہ میں رحیم یار خان میں خواتین واک، سٹی پارک اور صادق آباد میں بھی ”خواتین کانفرنس“کا انعقاد کیا جائے گا۔انھوں نے کہا کہ جماعت اسلامی اس بات کے عزم کا اظہار کرتی ہے کہ 8مارچ عالمی یوم خواتین کو مسلمان عورت کی شان و شوکت کا دن کے طور پر منائیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جماعت اسلامی حلقہ خواتین کی جدو جہدہر پاکستانی خاتون کے لئے ایک باعزت اور محفوظ زندگی کی جدوجہد ہے ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ عورت کی خوشیاں اس کے خاندان سے منسلک ہیں اور ایک پر سکون زندگی کے لئے خاندان کی بقا ضروری ہے عورت کا حق ہے کہ اس کی اور اس کے بچوں کی کفالت کی جائے۔ اور اگر ضرورت پڑے تو اس کو باعزت روزگار فراہم کیا جائے، تعلیم ہر انسان کا بنیادی حق ہے اور دین کا حکم مگر جاگیر دارانہ نظام میں لڑکیوں پر تعلیم کے دروازے بند کر دیئے گئے ہیں جبکہ ان کے نمائندے پارلیمنٹ میں موجود ہیں بحیثیت انسان ہم عورت اور مرد کی برابری میں یقین رکھتے ہیں انھوں نے مختلف سوالوں کے جوا بات دیتے ہوئے کہا کہ میڈیا پر مصنوعات بیچنے کے لئے عورت کی خوبصوری کو استعمال کرنا بطور انسان عورت کی توہین ہے اس ضمن میں میڈیا کے ظابطہ اخلاق پر مؤثر قانون سازی کی جائے۔ پاکستان میں عورتیں جاہلانہ رسم ورواج اور فرسودرہ ذہنیت کا شکار ہوتی ہیں تعلیم یافتہ طبقہ میں بھی عورت کو اسلام کے دیئے ہوئے حقوق سے محروم رکھا جاتا ہے اور اس کوذہنی اور جسمانی تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ زینب اور نور جیسے واقعات مسلم معاشرے کے لئے بد نماداغ ہیں ہم اپنے معاشرے کی بچیوں کے لئے محفوظ بنانا چاہتے ہیں انہوں نے کہا کہ ہم دنیا کو مظلوم کشمیری اور فلسطینی عورت بھی یاد دلانا چاہتے ہیں جس سے عورت ہونے کے ساتھ ساتھ انسان ہونے کا حق بھی چھین لیا گیا ہے قابظ افواج نے فلسطینی اور کشمیری عورت سے اس کا خاندان، گھر اور عزت چھین کر اس سے زندگی کا حق بھی چھین لیا ہے ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ عورتوں کے عالمی دن کے موقع پر اقوام متحدہ ان مظلوم خواتین کو بھی ان کا سب سے بڑا آزادی کا حق دلانے کے لئے عملی اقدامات اٹھائے۔تسنیم سرور نے پاکستانی حکمرانوں، پالیسی ساز اداروں اور مقتدر قوتوں اور طبقات سے ہمارا مطالبہ ہے کہ روایات کے نام پر ہونے والے ہر قسم کے جرائم کے خاتمے کے لئے مجرموں کو خصوصی عدالتوں کے ذریعے فوری کیفرکردار تک پہنچایا جائے۔دور دراز گاؤں اور دیہاتوں کی خواتین کے لئے بنیادی صحت کے مراکز کا جال بچھایاجائے۔ہر صوبے میں خواتین کے لئے مفت پرائمری تعلیم کے ساتھ علیحدہ میڈیکل کالجز اور یونیورسٹیاں قائم کی جائیں۔خواتین کو ہراساں کرنیوالوں کے خلاف قانون پر موثر عمل درآمد کروایا جائے۔خواتین کی خود کشی چولہا پھٹنے اور ایسے دیگر حادثات کی فوری اور خصوصی تحقیقات لازم قرار دی جائیں۔مجبور اور بے سہارا خواتین کی کفالت کی ذمہ داری ریاست اٹھائیں اور ان کے لئے باعزت اور محفوظ اقامتی ادارے قائم کئے جائیں۔بڑے شہروں میں کام کے اوقات میں خواتین کے لئے خصوصی ٹرانسپورٹ فراہم کی جائے۔خواتین ورکرز کو معاشرتی روایات کے خلاف ڈریس کو ڈاختیار کرنے پر مجبور کرنے والے اداروں کو بند کیا جائے۔خواتین ورکرز سے طے شدہ اوقات کار سے زائد کام دینے پر سختی سے پابندی ہوگی۔ملازمت پیشہ خواتین کو زچگی کے اس عرصہ میں دو ماہ کی چھٹی مکمل تنخواہ کے ساتھ اور پرورش کے لئے آدھی تنخواہ پر چھٹی کا حق دیا جائے گا۔ چھٹی کے عرصہ میں خواتین کو ملازمت اور مقام ملازمت کا مکمل تحفظ حاصل ہوگا۔ضلعی سطح پر کاٹیج انڈسٹریز قائم کی جائے چھوٹے پیمانے پر بزنس کرنے والی خواتین کو مارکیٹنگ اور بلاسودقرضے آسان شرائط پر فراہم کیا جائے۔خواتین کی جسمانی صحت تندرستی اور تفریح کے لئے اسلامی تصور حیٰاکے مطابق سرگرمیوں، ٹرانسپورٹ کی سہولت اور مقابلوں کو فروغ دیا جائے۔کشمیری خواتین کو حق خود ارادیت دلانے کے لئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں۔اس موقع پر جماعت اسلامی خواتین ونگ کی عہدیداران شہنازمجید، مریم جمیل،سدرہ ہارون،عائشہ عزیز بھی موجود تھیں

Check Also

وفاق شہریوں سے 2 ماہ کے یوٹیلٹی بلز نہ لینے پر غور کرے، سندھ حکومت

ملک میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے پیش نظر حکومت سندھ نے وفاق سے شہریوں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *